Manzar Se Hain Na Deeda Beena|Iftikhar Arif Poetry

Manzar Se Hain Na Deeda Beena|Iftikhar Arif Poetry

Manzar Se Hain Na Deeda Beena Ke Dam Se Hain
Sab moujze tilisam tamasha ke dam se hain

Mitti tou samnne ka hawala hai aur bas
Kozay mein jitney rang hain darya ke dam se hain

Kya aisi manzilon ke liye naqad jaan gunwayen
Jo khud hamare naqash kaf pa ke dam se hain

Yeh sari jannatein yeh jahannam azab-o-ajar
Sari qayamatein esi duniya ke dam se hain

Hum saray yaad gar zameen-o-zamana log
Ek sahib zameen-o-zamana ke dam se hain

Manzar se hain na deeda beena ke dam se hain
Sab moujze tilisam tamasha ke dam se hain
غزل
منظر سے ہیں نہ دیدہ بینا کے دم سے ہیں
سب معجزے طلسم تماشا کے دم سے ہیں

مٹی تو سامنے کا حوالہ ہے اور بس
کوزے میں جتنے رنگ ہیں دریا کے دم سے ہیں

کیا ایسی منزلوں کے لیے نقد جاں گنوائیں
جو خود ہمارے نقش کف پا کے دم سے ہیں

یہ ساری جنتیں یہ جہنم عذاب و اجر
ساری قیامتیں اسی دنیا کے دم سے ہیں

ہم سارے یادگار زمین و زمانہ لوگ
اک صاحب زمین و زمانہ کے دم سےہیں

منظر سے ہیں نہ دیدہ بینا کے دم سے ہیں
سب معجزے طلسم تماشا کے دم سے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں