Qalam Bhi Us Ka Hai Talwar Bhi Usi Ki Hai

Qalam Bhi Us Ka Hai Talwar Bhi Usi Ki Hai

Qalam Bhi Us Ka Hai Talwar Bhi Usi Ki Hai
Abhi bhi aap ko umeed behtari ki hai

Agarchay phool bhi bikhray hain us ki aandhi mein
Zyada fikar usay apni tokri ki hai

Hum us ke dour hukumat se khob waqif hain
Gharon ke naam tameer be ghari ki hai

Tu kiya usay bhi na darya mein phenk do mazkoor
Keh aaj neki nahi mein ne aik badi ki hai

Qalam bhi us ka hai talwar bhi usi ki hai
Abhi bhi aap ko umeed behtari ki hai
غزل
قلم بھی اُس کا ہے تلوار بھی اُسی کی ہے
ابھی بھی آپ کو اُمید بہتری کی ہے

اگرچہ پھول بھی بکھرے ہیں اُس کی اندھی میں
زیادہ فکر اُسے اپنی ٹوکری کی ہے

ہم اُس کے دورِ حکومت سے خوب واقف ہیں
گھروں کے نام تعمیر بے گھری کی ہے

تو کیا اسے بھی نا دریا میں پھینک دو مذکور
کہ آج نیکی نہیں میں نے ایک بدی کی ہے

قلم بھی اُس کا ہے تلوار بھی اُسی کی ہے
ابھی بھی آپ کو اُمید بہتری کی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں