Giraya Aaina Khana-E-Dil Ko Maar Ke Hath

Giraya Aaina Khana-E-Dil Ko Maar Ke Hath

Giraya Aaina Khana-E-Dil Ko Maar Ke Hath
Makan lag gaya be hes karaya daar ke hath

Gala hi ghoont diya khushnuma gulabon ka
Baray hi sakht tabiyat thay barf zaar ke hath

Jo sach ko likhtay hoye bar bar kanptay hoon
To kyun nah phaink diye jayen woh utaar ke hath

Yeh kis ne chheen li khushbo bhari sukoon ki sham
Yeh kon kar gaya khali bhari bahaar ke hath

Abhi to sirf girebaan khainch rakha hai
Abhi to aayen gay gardan talak bhi yaar ke hath

Hum aisay log tu raye hi de saken gay faqt
Keh faisla to hai arbab-e-ikhtiyar ke hath

Giraya aaina khana-e- dil ko maar ke hath
Makan lag gaya be hes karaya daar ke hath
غزل
گرایا آئینہ خانہ ء دل کو مار کے ہاتھ
مکان لگ گیا بے حس کرایہ دار کے ہاتھ

گلا ہی گھونٹ دیا خوشنما گلابوں کا
بڑے ہی سخت طبیعت تھے برف زار کے ہاتھ

جو سچ کو لکھتے ہوئے بار بار کانپتے ہوں
تو کیوں نہ پھینک دیئے جائیں وہ اُتار کے ہاتھ

یہ کس نے چھین لی خوشبو بھری سکون کی شام
یہ کون کر گیا خالی بھری بہار کے ہاتھ

ابھی تو صرف گریبان کھینچ رکھا ہے
ابھی تو آئیں گے گردن تلک بھی یار کے ہاتھ

ہم ایسے لوگ تو رائے ہی دے سکیں گے فقط
کہ فیصلہ تو ہے اربابِ اختیار کے ہاتھ

گرایا آئینہ خانہ ء دل کو مار کے ہاتھ
مکان لگ گیا بے حس کرایہ دار کے ہاتھ
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں