Woh Raah Chalte Hoye Mili Thi

Woh Raah Chalte Hoye Mili Thi

Woh Raah Chalte Hoye Mili Thi
Woh jis ke chashmay ke

Motay sheeshon peh
Zaat ke dukh ki
Gird ki teh
Jami hoi thi
Woh jis ke chehre
Woh jis mathe par ik musalsal safar ka noha likha howa tha
Woh jis ki aankhon mein
Ratjagon ke azaab deeda zeher ke khushbu rachi hoi thi
Woh jis ki baton mein
Iss ke andar ka zard sannata bolta tha
Woh aik larki
Raju kora bartan thi
Jis ka fateh hi iss ka maftooh
Woh kora bartan
Ki jis ko jeene ka lams dene ki andhi khwahish
Hamesha wasal nafi ki soorat mein
Apne fateh ko marti hai
Woh aik lamhe mein rah chalte hoye mile thi
Woh zindagi ke tamam barson tamam salon peh chha gayi hai
Woh raah chalte hoye mili thi
نظم
وہ راہ چلتے ہوئے ملی تھی
وہ جس کے چشمے کے موٹے شیشوں پہ ذات کے دکھ کی گرد کی تہ
جمی ہوئی تھی
وہ جس کے چہرے
وہ جس کے ماتھے پر اک مسلسل سفر کا نوحہ لکھا ہوا تھا
وہ جس کی آنکھوں میں
رتجگوں کی عذاب دیدہ زہر کے خوشبو رچی ہوئی تھی
وہ جس کی باتوں میں
اس کے اندر کا زرد سناٹا بولتا تھا
وہ ایک لڑکی
رجو کورا برتن تھی
جس کا فاتح ہی اس کا مفتوح
وہ کورا برتن
کی جس کو جینے کا لمس دینے کی اندھی خواہش
ہمیشہ وصل نفی کی صورت میں
اپنے فاتح کو مارتی ہے
وہ ایک لڑکی
وہ ایک لمحے میں راہ چلتے ہوئے ملے تھی
وہ زندگی کے تمام برسوں تمام سالوں پہ چھا گئی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں