Bhula Pana Bahut Mushkil Hai

بھلا پانا بہت مشکل ہے سب کچھ یاد رہتا ہے
محبت کرنے والا اس لیے برباد رہتا ہے
اگر سونے کے پنجڑے میں بھی رہتا ہے تو قیدی ہے
پرندہ تو وہی ہوتا ہے جو آزاد رہتا ہے
چمن میں گھومنے پھرنے کے کچھ آداب ہوتے ہیں
ادھر ہرگز نہیں جانا ادھر صیاد رہتا ہے
لپٹ جاتی ہے سارے راستوں کی یاد بچپن میں
جدھر سے بھی گزرتا ہوں میں رستہ یاد رہتا ہے
ہمیں بھی اپنے اچھے دن ابھی تک یاد ہیں راناؔ
ہر اک انسان کو اپنا زمانہ یاد رہتا ہے
bhula pana bahut mushkil hai sab kuchh yaad rahta hai
mohabbat karne wala is liye barbaad rahta hai
 
agar sone ke pinjre mein bhi rahta hai to qaidi hai
parinda to wahi hota hai jo aazad rahta hai
 
chaman mein ghumne phirne ke kuchh aadab hote hain
udhar hargiz nahin jaana udhar sayyaad rahta hai
 
lipat jati hai sare raston ki yaad bachpan mein
jidhar se bhi guzarta hun main rasta yaad rahta hai
 
hamein bhi apne achchhe din abhi tak yaad hain ‘rana’
har ek insan ko apna zamana yaad rahta hai

اپنا تبصرہ بھیجیں