Tumhary Naam Ki Bad Duain Rad Ki Hain

نظم
تمہارے نام کئی بد دعائیں رد کی ہیں
ہزار طیش بھرے لفظ لکھ کر کاٹے ہیں

جنہیں تمہاری سماعت کی نظر ہونا تھا
وہ شعر خود کو سنائے ہیں درد با نٹے ہیں

تمہیں عجیب کہوں تو عجیب لگتا ہے
تم تو صرف طواہم کی رائیگانی ہو

میں کائنات کی سچائی تم کو سمجھا تھا
کہاں خبر تھی کہ تم تو میری کہانی ہو

تمہاری نیم اُداسی بھری نگا ہوں میں
اُسی کا عکس ہے جو تم کو زہر لگتا تھا

اُسی کے حلقہ ضراب میں چلی گئی ہو
خیال قرب جس کا تمہیں قہر لگتا تھا

میں ہنس رہا ہوں کہ دنیا کو کیا دیکھا رہی ہو
میں رو رہا ہوں کہ تم سچ نہیں بتا رہی ہو

تم اپنے زخم چباتی ہو خون پیتی ہو
یہی تو دکھ ہے کہ تم خود پے آپ بیتی ہو

ملال و حزن تو ایندھن ہے تمہارے لیے
تم اپنے گرد اُداسی بنا کر جیتی ہو

یہ نظم پڑھ کر تمیہں بھی یہ لگ رہا ہو گا
نہیں یہ اور کوئی ہے میرا علیؔ تو نہیں

میں چاہتا بھی یہی ہوں کہ تم کو ایسا لگے
کہ جس کو مار دیا تم نے یہ وہی تو نہیں

 Nazam

Tumhary Naam Ki Bad Duain Rad Ki Hain
Hazar taish bharay lafz lekh kr katay hain

Jinhain tumhare samat ki nazar hona tha
Wo sher khud ko sunaya hain dard bantay hain

Tumhain ajibe kaho to ajibe lagta hai
Tum to sirf tawahim ki rayagani ho

Main kainat ki suchi tum ko samjha tha
Kahaan khabar thi keh tum to meri kahani ho

Tumhare naeem udasi bhari negahon main
Usi ka aks hai jo tum ko zaher lagta hai

Usi ky halka e zarab main chali ge ho
Khayal qurb jis ka tumhain qahir lagta tha

Main hans raha hun keh dunyia ko kiya dekh rahi ho
Main ro raha hun keh tum such nahi bata rahi ho

Tum apne zakhm chobati ho khoon pite ho
Yahi to dukh hai keh tum khud py aap beeti ho

Malal o hozan to endhan hai tumhary leya
Tum apne gerd udasi bana kr jite ho

Yeh nazam phar kar tumhain bhi yeh lag raha hoga
Nahi yeh aur koi hai mera “ali’’ to nahi

Main chahta bhi yahi hun keh tum ko asia lagay
Keh jis ko maar diya tum nay yeh to wohi hai

اپنا تبصرہ بھیجیں