Pathar

پتھر :
ریت سے بت نہ بنا اے مرے اچھے فن کار
ایک لمحے کو ٹھہر میں تجھے پتھر لا دوں
میں ترے سامنے انبار لگا دوں لیکن
کون سے رنگ کا پتھر ترے کام آئے گا
سرخ پتھر جسے دل کہتی ہے بے دل دنیا
یا وہ پتھرائی ہوئی آنکھ کا نیلا پتھر
جس میں صدیوں کے تحیر کے پڑے ہوں ڈورے
کیا تجھے روح کے پتھر کی ضرورت ہوگی
جس پہ حق بات بھی پتھر کی طرح گرتی ہے
اک وہ پتھر ہے جو کہلاتا ہے تہذیب سفید
اس کے مرمر میں سیہ خون جھلک جاتا ہے
ایک انصاف کا پتھر بھی تو ہوتا ہے مگر
ہاتھ میں تیشۂ زر ہو تو وہ ہاتھ آتا ہے
جتنے معیار ہیں اس دور کے سب پتھر ہیں
جتنی اقدار ہیں اس دور کی سب پتھر ہیں
سبزہ و گل بھی ہوا اور فضا بھی پتھر
میرا الہام ترا ذہن رسا بھی پتھر
اس زمانے میں تو ہر فن کا نشاں پتھر ہے
ہاتھ پتھر ہیں ترے میری زباں پتھر ہے
ریت سے بت نہ بنا اے مرے اچھے فن کار
 :Pathar
ret se but na bana ai mere achchhe fankar
ek lamhe ko thahar main tujhe patthar la dun
main tere samne ambar laga dun lekin

kaun se rang ka patthar tere kaam aaega
surkh patthar jise dil kahti hai be-dil duniya
ya wo pathrai hui aankh ka nila patthar

jis mein sadiyon ke tahayyur ke pade hon dore
kya tujhe ruh ke patthar ki zarurat hogi
jis pe haq baat bhi patthar ki tarah girti hai

ek wo patthar hai jo kahlata hai tahzib-e-safed
us ke marmar mein siyah khun jhalak jata hai

ek insaf ka patthar bhi to hota hai magar
hath mein tesha-e-zar ho to wo hath aata hai

jitne meyar hain is daur ke sab patthar hain
jitni aqdar hain is daur ki sab patthar hain

sabza o gul bhi hawa aur faza bhi patthar
mera ilham tera zehn-e-rasa bhi patthar

is zamane mein to har fan ka nishan patthar hai
hath patthar hain tere meri zaban patthar hai
ret se but na bana ai mere achchhe fankar

اپنا تبصرہ بھیجیں