Ashk Aankh Mein Phir Atak Raha - Parveen Shakir

Ashk Aankh Mein Phir Atak Raha – Parveen Shakir

Ashk Aankh Mein Phir Atak Raha Hai
Kankar sa koi khatak raha hai

Mein uss ke khayal se garizaan
Woh meri sada jhatak raha hai

Tehreer usi ki hai magar dil
Khat parhte hoye atak raha hai

Hain phone peh kis ke saath batein
Aur zehen kahan bhatak raha hai

Sadiyun se safar mein hai samandar
Sahil peh thakan tapak raha hai

Ek chand saleeb shakh gul par
Bali ki tarah latak raha hai

Ashk aankh mein phir atak raha hai
Kankar sa koi khatak raha hai
غزل
اشک آنکھ میں پھر اٹک رہا ہے
کنکر سا کوئی کھٹک رہا ہے

میں اُس کے خیال سے گریزاں
وہ میری صدا جھٹک رہا ہے

تحریر اُسی کی ہے مگر دل
خط پڑھتے ہوئے اٹک رہا ہے

ہیں فون پہ کس کے ساتھ باتیں
اور ذہن کہاں بھٹک رہا ہے

صدیوں سے سفر میں ہے سمندر
ساحل پہ تھکن ٹپک رہا ہے

اک چاند صلیب شاخ گل پر
بالی کی طرح لٹک رہا ہے

اشک آنکھ میں پھر اٹک رہا ہے
کنکر سا کوئی کھٹک رہا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں