Khwab Palkon Ki Hatheli | Khalil Ur Rehman Poetry

Khwab Palkon Ki Hatheli | Khalil Ur Rehman Poetry

Khwab Palkon Ki Hatheli Peh Chuney Rehte Hain
Kon Jane woh kabhi neend churane aaye

Mujh peh utray mere ilham ki barish ban kar
Mujh ko ik boond samandar mein chuphane aaye

Jab mein sanwaron tou woh gulnar kare mera tabassum
Jab mein hans doon tou woh ghuncha sa chatkhana chahe

Jab mein tanha hoon mera hath pakar le aakar
Jab mein chup hoon tou woh badal sa barasna chahe

Mere barson ki udaasi ko silla kuch tou milay
Us se keh do woh mera qaraz chukanay aaye

Woh mere kanptey honton ki sadayen son le
Ya mere zabt ko izhar ka lehja day day

Ya mujhe torr day ik gehri nazar se choo kar
Ya chum ke takhleeq ko sancha day day

Meri tarteeb utha jaye khuda ki manind
Aur mit jawon tou phir mujh ko banane aaye

Khwab palkon ki hatheli peh chunay rehte hain
Kon jane woh kabhi neend churane aaye
غزل
خواب پلکوں کی ہتیھلی پہ چنے رہتے ہیں
کون جانے وہ کبھی نیند چرانے آئے

مجھ پہ اُترے میرے الہام کی بارش بن کر
مجھ کو اک بوند سمندر میں چھپانے آئے

جب میں سنوروں تو وہ گلنار کرے میرا تبسم
جب میں ہنس دوں تو وہ غنچہ سا چٹخنا چاہے

جب میں تنہا ہوں میرا ہاتھ پکڑ لے آکر
جب میں چپ ہوں تو وہ بادل سا برسنا چاہے

میرے برسوں کی اُداسی کو صلہ کچھ تو ملے
اس سے کہ دو وہ میرا قرض چکانے آئے

وہ میرے کانپتے ہونٹوں کی صدائیں سن لے
یا میرے ضبط کو اظہار کا لہجہ دے دے

یا مجھے توڑ دے اک گہری نظر سے چھو کر
یا چوم کے تخلیق کو سانچا دے دے

میری ترتیب اُٹھا جائے خدا کی مانند
اور مٹ جاوں تو پھر مجھ کو بنانے آئے

خواب پلکوں کی ہتھیلی پہ چنے رہتے ہیں
کون جانے وہ کبھی نیند چرانے آئے

اپنا تبصرہ بھیجیں