Yeh Jo Kam Jurrat-E-Izhaar Ki Majboori Hai

Yeh Jo Kam Jurrat-E-Izhaar Ki Majboori Hai

Yeh Jo Kam Jurrat-E-Izhaar Ki Majboori Hai
Bas yahi tere tarafdar ki majboori hai

Shauq bhi apni jaga jaib ka gham apni jaga
Daam par behas kharidaar ki majboori hai

Haq peh bolen gay to aasaishen chhin jayen gi
Khaamshi, sahib-e-sarkar ki majboori hai

Shahr mein ab bhi mohabbat ki fiza qaim hai
Yeh jo nafrat hai yeh do chaar ki majboori hai

Jo munafiq hai beher haal woh dhoka de gaa
Gardanen kaatna, talwar ki majboori hai

Hadsay dil mein pare rehte tu mar jati mein
Shairi mujh si qalam kar ki majboori hai

Yeh sahar usay girnay se bacha sakta hai
Dar se lag jana bhi deewar ki majboori hai

Uski fitrat mein dagha bazi nazar aati hai
Chorna shouq nahi yaar ki majboori hai

Yeh jo kam jurrat-e-izhaar ki majboori hai
Bas yahi tere tarafdar ki majboori hai
غزل
یہ جو کم جراتِ اِظہار کی مجبوری ہے
بس یہی تیرے طرفدار کی مجبوری ہے

شوق بھی اپنی جگہ جیب کا غم اپنی جگہ
دام پر بحث خریدار کی مجبوری ہے

حق پہ بولیں گے تو آسائشیں چھن جائیں گی
خامشی، صاحبِ سرکار کی مجبوری ہے

شہر میں اب بھی محبت کی فضا قائم ہے
یہ جو نفرت ہے یہ دو چار کی مجبوری ہے

جو منافق ہے بہرحال وہ دھوکہ دے گا
گردنیں کاٹنا، تلوار کی مجبوری ہے

حادثے دل میں پڑے رہتے تو مر جاتی میں
شاعری مجھ سی قلم کار کی مجبوری ہے

یہ سہارا اُسے گرنے سے بچا سکتا ہے
در سے لگ جانا بھی دیوار کی مجبوری ہے

اُسکی فطرت میں دغا بازی نظر آتی ہے
چھوڑنا شوق نہیں یار کی مجبوری ہے

یہ جو کم جراتِ اِظہار کی مجبوری ہے
بس یہی تیرے طرفدار کی مجبوری ہے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں