Bhool Jao Mujhe

بھول جاو مجھے:
وہ تو یوں تھا کہ ہم
اپنی اپنی ضرورت کی خاطر
اپنے اپنے تقاضوں کو پورا کیا
اپنے اپنے ارادوں کی تکمیل میں
تیرہ و تار خواہش کی سنگلاخ راہوں پہ چلتے رہے
پھر بھی راہوں میں کتنے شگوفے کھلے
وہ تو یوں تھا کہ بڑھتے گئے سلسلے
ورنہ یوں ہے کہ ہم
اجنبی کل بھی تھے
اجنبی اب بھی ہیں
اب بھی یوں ہے کہ تم
ہر قسم توڑ دو
سب ضدیں چھوڑ دو
اور اگر یوں نہ تھا تو یوں ہی سوچ لو
تم نے اقرار ہی کب کیا تھا کہ میں
تم سے منسوب ہوں
میں نے اصرار ہی کب کیا تھا کہ تم
یاد آؤ مجھے
بھول جاؤ مجھے
:Bhool Jao Mujhe
 
wo to yun tha ki hum
apni apni zarurat ki khatir
 
apne apne taqazon ko pura kiya
apne apne iradon ki takmil mein
 
tira-o-tar khwahish ki sanglakh rahon pe chalte rahe
phir bhi rahon mein kitne shagufe khile
 
wo to yun tha ki badhte gae silsile
warna yun hai ki hum
 
ajnabi kal bhi the
ajnabi ab bhi hain
 
ab bhi yun hai ki tum
har qasam tod do
 
sab ziden chhod do
aur agar yun na tha to yunhi soch lo
 
tum ne iqrar hi kab kiya tha ki main
tum se mansub hun
 
main ne israr hi kab kiya tha ki tum
yaad aao mujhe
 
bhul jao mujhe

اپنا تبصرہ بھیجیں