Tum Iss Kharabay Mein Chaar Chay Din

Tum Iss Kharabay Mein Chaar Chay Din

Tum Iss Kharabay Mein Chaar Chay Din Tehel Gai Ho
So aain mumkin hai dil ki halat badal gai ho

Tamam din iss dua mein katta hai kuch dinon se
Mein jaon kamray mein to udaasi nikal gai ho

Kisi ke aanay peh aisay halchal hoi hai mujh mein
Khamosh jungle mein jaise bandooq chal gai ho

Yeh nah ho ghar mein helon tu girne lagay barada
Dukhon ki deemak badan ki lakri nigal gai ho

Yeh chotay chotay kai hawadis jo ho rahe hain
Kisi ke sar se bari museebat nah tal gai ho

Hamara malba hamare qadmon aa gira hai
Plate mein jaise mom batti pighal gai ho

Tum iss kharabay mein chaar chay din tehel gai ho
So aain mumkin hai dil ki halat badal gai ho
غزل
تم اِس خرابے میں چار چھ دن ٹہل گئی ہو
سو عین ممکن ہے دل کی حالت بدل گئی ہو

تمام دن اِس دعا میں کٹتا ہے کچھ دنوں سے
میں جاؤں کمرے میں تو اداسی نکل گئی ہو

کسی کے آنے پہ ایسے ہلچل ہوئی ہے مجھ میں
خموش جنگل میں جیسے بندوق چل گئی ہو

یہ نہ ہو گھر میں ہلوں تو گرنے لگے برادہ
دکھوں کی دیمک بدن کی لکڑی نگل گئی ہو

یہ چھوٹے چھوٹے کئی حوادث جو ہو رہے ہیں
کسی کے سر سے بڑی مصیبت نہ ٹل گئی ہو

ہمارا ملبہ ہمارے قدموں آگرا ہے
پلیٹ میں جیسے موم بتی پگھل گئی ہو

تم اِس خرابے میں چار چھ دن ٹہل گئی ہو
سو عین ممکن ہے دل کی حالت بدل گئی ہو
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں