Mahino Bad Daftar A Rahy Hain

Ghazal :
Mahino Baad Daftar A Rahe Hain
Hum ek sadme se bahar a rahe hain

Teri bahoon se dil okta gaya hai
Ab es jhoole main chakar a rahe hain

Kahaan soya hai chokidar mera
Yeh kaise log andar a rahe hain

Samandar kar chuka tasleem humko
Khazane khud hi oper a rahe hain

Yahi ek din bacha tha dekhne ko
Use bas main betha ky a rahe hain
 
Mahino Bad Daftar A Rahe Hain
Hum ek sadme say bahar a rahe hain
غزل
مہینوں بعد دفتر آرہے ہیں
ہم اک صدمے سے باہر آرہے ہیں

تیری باہنوں سے دل اُکتا گیا ہے
اب اس جھولے میں چکر آرہے ہیں

کہاں سویا ہے چوکیدار میرا
یہ کیسے لوگ اندر آ رہے ہیں

سمندر کر چکا تسلیم ہم کو
خزانے خود ہی اُوپر آ رہے ہیں

یہی ایک دن بچا تھا دیکھنے کو
اُسے بس میں بیٹھا کے آ رہے ہیں
 
مہینوں بعد دفتر آرہے ہیں
ہم اک صدمے سے باہر آرہے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں