Milain Phir Aa K Isi Mor Par Dua Karna

شاعر:اعتبار ساؔجد
نظم
ملیں پھر آکے اسی موڑ پر دعا کرنا
کڑا ہے اب کے ہمارا سفر دعا کرنا
دیار خواب کی گلیوں، جو بھی نقشہ ہو
مکین شہر نہ بدلیں نظر، دعا کرنا
چراغ جاں پہ اس آندھی میں خریت گزرے
کوئی امید نہیں ہے مگر دعا کرنا
تمہارے بعد مرے زخم نا رسائی کو
نہ ہو نصیب کوئی چارہ دعا کرنا
مسافتوں میں نہ آزار جی کو لگ جائے
مزاج داں نہ ملیں ہم سفر دعا کرنا
دکھوں کی دھوپ میں دامن کشا ملیں سائے
ہرے رہیں یہ طب کے شجر دعا کرنا
نشاط قریب میں آئی ہے ایسی نیند مجھے
کھلے نہ آنکھ میری عمر بھردعا کرنا
Nazam
Milain Phir Aa K Isi Mor Par Dua Karna
Kara hai ab ky hamara saffar dua karna
Diyar khawab ki glion jo bhi naqsha ho
Makeen sher na badlaion nazar karna
Chrag jaan pay us andhi mian khriyit guzary
Koi umeed nahi hai magar dua karna
Tamhary bad mary zakham na rassi ko
Na ho naseeb koi charaha dua karan
Mosafto main na aazar ji ko lg jaya
Mezaj dayan na milay hum saffar dua karna
Dukho ki dhoop mian daman kashaa milay sayya
Hary rahay yeh teb ky shajar dua karna
Nishat qarib mein aayi hai neend mujhe
Kholay na ankh meri umar bhar dua krna

اپنا تبصرہ بھیجیں