Jo Diye Jantay Ho Jan Bah Lab Hote Hain

Jo Diye Jantay Ho Jan Bah Lab Hote Hain

Jo Diye Jantay Ho Jan Bah Lab Hote Hain
Kis aziyat mein woh sab aakhir shab hote hain

Lutf tab hai keh koi hum se buron ko chahe
Achi cheezon ke talabgaar to sab hote hain

Log phoolon ko faqt phool samjh lete hain
Aur mere zehan mein tab aap ke lab hote hain

Woh jo apne hoon kabhi chhor ke jate hi nahi
Jo bechhar jate hain woh apne hi kab hote hain

Tum ne ehsas dilaya hai mukar kar mujh ko
Dhokay bazoon ke to waday bhi ghazab hote hain

Teri khawahish hai mohabbat ki bhi paimaish ho
Yeh bata taray bhala kitne arab hote hain
Jo diye jantay ho jan bah lab hote hain
Kis aziyat mein woh sab aakhir shab hote hain
غزل
جو دئیے، جانتے ہو جان بہ لب ہوتے ہیں
کس اذیت میں وہ سب آخر شب ہوتے ہیں

لطف تب ہے کہ کوئی ہم سے بُروں کو چاہے
اچھی چیزوں کے طلبگار تو سب ہوتے ہیں

لوگ پھولوں کو فقط پھول سمجھ لیتے ہیں
اور مرے ذہن میں تب آپ کے لب ہوتے ہیں

وہ جو اپنے ہوں کبھی چھوڑ کے جاتے ہی نہیں
جو بچھڑ جاتے ہیں وہ اپنے ہی کب ہوتے ہیں

تم نے احساس دلایا ہےمکر کر مجھ کو
دھوکے بازوں کے تو وعدے بھی غضب ہوتے ہیں

تیری خواہش ہے محبت کی بھی پیمائش ہو
یہ بتا تارے بھلا کتنے ارب ہوتے ہیں

جو دئیے، جانتے ہو جان بہ لب ہوتے ہیں
کس اذیت میں وہ سب آخر شب ہوتے ہیں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں