Shakal-O-Soorat Se Nazar Aatay Thay Maghroor

Shakal-O-Soorat Se Nazar Aatay Thay Maghroor

Shakal-O-Soorat Se Nazar Aatay Thay Maghroor Chiragh
Hum shab-e-gham ke sataye hote bay noor chiragh

Mere aangan ko ujalay ki nahi hai aadat
Meri chokhat se jala ao kahin dour chiragh

Zakhm har sham hatheeli peh yun lo dete hain
Jaisay jaltay hain musalsal, shab-e-ashur, chirgh

Meri mitti mein jo jugnu hain wohi kafi hain
Nah tere chand ki khwahish hai nah manzoor chiragh

Raat kandhon peh uthaye hoye bujh jate hain
Hum hain ujrat peh bulaye gaye mazdoor, chiragh

Tergi wale meri zid ko nahi jante hain
Mere shajray mein likha jaye ga ghayoor chiragh

Ab mere baad mere ghar mein paray hote hain
Atar, loban , agar battiyan, kafoor, chiragh

Shakal-o-soorat se nazar aatay thay maghroor chiragh
Hum shab-e-gham ke sataye hote bay noor chiragh
غزل
شکل و صورت سے نظر آتے تھے مغرور چراغ
ہم شبِ غم کے ستائے ہوتے بے نور چراغ

میرے آنگن کو اُجالے کی نہیں ہے عادت
میری چوکھٹ سے جلا آؤ کہیں دور چراغ

زخم ہر شام ہتھیلی پہ یوں لو دیتے ہیں
جیسے جلتے ہیں مسلسل ، شبِ عاشور، چراغ

میری مٹھی میں جو جگنو ہیں وہی کافی ہیں
نہ ترے چاند کی خواہش ہے نہ منظور چراغ

رات، کندھوں پہ اُٹھائے ہوئے بجھ جاتے ہیں
ہم ہیں اُجرت پہ بلائے گئے مزدور ، چراغ

تیرگی والے مری ضد کو نہیں جانتے ہیں
میرے شجرے میں لکھا جائے گا غیور چراغ

اب مرے بعد مرے گھر میں پڑے ہوتے ہیں
عطر ، لوبان، اگربتیاں، کافور، چراغ

شکل و صورت سے نظر آتے تھے مغرور چراغ
ہم شبِ غم کے ستائے ہوتے بے نور چراغ
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں