Kia Karen Hum Jhoot Ke Aadi Nahi

Kia Karen Hum Jhoot Ke Aadi Nahi

Kia Karen Hum Jhoot Ke Aadi Nahi
Aur such kehne ki azadi nahi

Gul Khelata hai zamana subha-o-shaam
Zindagi rangeen hai sadi nahi
 
Es taluq mein kahan mumkin hai talaq
Yeh mohabbat hai koi shadi nahi
 
Kia karen hum jhoot ke aadi nahi
Aur such kehne ki azadi nahi
غزل
کیا کریں ہم جھوٹ کے عادی نہیں
اور سچ کہنے کی آزادی نہیں
 
گل کھلاتا ہے زمانہ صبح و شام
زندگی رنگین ہے سادی نہیں
 
اس تعلق میں کہاں ممکن طلاق
یہ محبت ہے کوئی شادی نہیں
 
کیا کریں ہم جھوٹ کے عادی نہیں
اور سچ کہنے کی آزادی نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں