Shah Se Chup Kar Qaidi Ne Shahzadi Ko Pegham

Ghazal
Shah Se Chup Kar Qaidi Ne Shahzadi Ko Pegham Likha
Jang se bhaagne walon main shahzaday ka bhi naam likha

Door daraz say anay walay khat meri Hamsai kay thay
aik din himat kar kay us nay apna asli naam likha

Aik mohabbat khtam hoi to dusari ki taiyari  ki
Nai kahani ke aagaz main pehli ka anjam likha

Hum dono ne apne apae dain pe qaim rehna tha
Ghar ki ek diwar pe allah ek deewar pe naam likha
غزل
شاہ سے چھپ کر قیدی نے شہزادی کو پیغام لکھا
جنگ سے بھاگنے والوں میں شہزادے کا بھی نام لکھا

دور دراز سے آنے والے خط میری ہمسائی کے تھے
اک دن ہمت کر کے اُس نے اپنا اصلی نام لکھا

ایک محبت ختم ہوئی تو دوسری کی تیاری کی
نئی کہانی کے آغاز میں پہلی کا انجام لکھا

ہم دونوں نے اپنے اپنے دین پہ قائم رہنا تھا
گھر کی اک دیوار پہ اللہ اک دیوار پہ نام لکھا

اپنا تبصرہ بھیجیں