Dil-E-NadanTujhe Hua Kya Hai

دل ناداں تجھے ہوا کیا ہے
آخر اس درد کی دوا کیا ہے
ہم ہیں مشتاق اور وہ بیزار
یا الٰہی یہ ماجرا کیا ہے
میں بھی منہ میں زبان رکھتا ہوں
کاش پوچھو کہ مدعا کیا ہے
جب کہ تجھ بن نہیں کوئی موجود
پھر یہ ہنگامہ اے خدا کیا ہے
یہ پری چہرہ لوگ کیسے ہیں
غمزہ و عشوہ و ادا کیا ہے
شکن زلف عنبریں کیوں ہے
نگہ چشم سرمہ سا کیا ہے
سبزہ و گل کہاں سے آئے ہیں
ابر کیا چیز ہے ہوا کیا ہے
ہم کو ان سے وفا کی ہے امید
جو نہیں جانتے وفا کیا ہے
ہاں بھلا کر ترا بھلا ہوگا
اور درویش کی صدا کیا ہے
جان تم پر نثار کرتا ہوں
میں نہیں جانتا دعا کیا ہے
میں نے مانا کہ کچھ نہیں غالبؔ
مفت ہاتھ آئے تو برا کیا ہے
Dil-E-NadanTujhe Hua Kya Hai
aakhir is dard ki dawa kya hai
 
hum hain mushtaq aur wo be-zar
ya ilahi ye majra kya hai
 
main bhi munh mein zaban rakhta hun
kash puchho ki muddaa kya hai
 
jab ki tujh bin nahin koi maujud
phir ye hangama ai khuda kya hai
 
ye pari-chehra log kaise hain
ghamza o ishwa o ada kya hai
 
shikan-e-zulf-e-ambarin kyun hai
nigah-e-chashm-e-surma sa kya hai
 
sabza o gul kahan se aae hain
abr kya chiz hai hawa kya hai
 
hum ko un se wafa ki hai ummid
jo nahin jaante wafa kya hai
 
han bhala kar tera bhala hoga
aur darwesh ki sada kya hai
 
jaan tum par nisar karta hun
main nahin jaanta dua kya hai
 
main ne mana ki kuchh nahin ‘ghaalib’
muft hath aae to bura kya hai

اپنا تبصرہ بھیجیں