Lamha Bhar Ke Liye Betha Jo Kabhi Chaaon Mein

Lamha Bhar Ke Liye Betha Jo Kabhi Chaaon Mein

Lamha Bhar Ke Liye Betha Jo Kabhi Chaaon Mein
Dhoop chubti hi rahi phir bhi mere paon mein

Aap ne mujh ko doobuyaa hai kisi aur jaga
Itni gehrai kahan hoti hain daryaon mein

Qais ka nah mujh peh gumaan ho nah kahi Laila tu
Dhoondne qais ko nika hoon mein seharaon mein

Rafta rafta mein sheh rag peh bhi aa puhunchi hai
Tou ne zanjeer jo dali hai mere paon mein

Jane kis shahr mein aabad howa hai ja kar
Aik darwaish howa karta tha iss gaon mein

Lamha Bhar Ke Liye Betha Jo Kabhi Chaaon Mein
Dhoop chubti hi rahi phir bhi mere paon mein
غزل
لمحہ بھر کے لیے بیٹھا جو کبھی چھاوں میں
دھوپ چبھتی ہی رہی پھر بھی میرے پاؤں میں

آپ نے مجھ کو ڈوبویا ہے کسی اور جگہ
اِتنی گہرائی کہاں ہوتی ہیں دریاؤں میں

قیس کا نہ مجھ پہ گماں ہو نہ کہی لیلیٰ تو
ڈھوندنے قیس کو نکلا ہوں میں صحراؤں میں

رفتہ رفتہ میں شہ رگ پہ بھی آ پہنچی ہے
تُو نے زنجیر جو ڈالی ہے میرے پاؤں میں

جانے کس شہر میں آباد ہوا ہے جا کر
ایک درویش ہوا کرتا تھا اِس گاؤں میں

اپنا تبصرہ بھیجیں