Duriyan SimaTne Mein Der Kuchh To Lagti Hai

دوریاں سمٹنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے
رنجشوں کے مٹنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

ہجر کے دوراہے پر ایک پل نہ ٹھہرا وہ
راستے بدلنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

آنکھ سے نہ ہٹنا تم آنکھ کے جھپکنے تک
آنکھ کے جھپکنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

حادثہ بھی ہونے میں وقت کچھ تو لیتا ہے
بخت کے بگڑنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

خشک بھی نہ ہو پائی روشنائی حرفوں کی
جان من مکرنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

فرد کی نہیں ہے یہ بات ہے قبیلے کی
گر کے پھر سنبھلنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

درد کی کہانی کو عشق کے فسانے کو
داستان بننے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

دستکیں بھی دینے پر در اگر نہ کھلتا ہو
سیڑھیاں اترنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

خواہشیں پرندوں سے لاکھ ملتی جلتی ہوں
دوست پر نکلنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

عمر بھر کی مہلت تو وقت ہے تعارف کا
زندگی سمجھنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

رنگ یوں تو ہوتے ہیں بادلوں کے اندر ہی
پر دھنک کے بننے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

ان کی اور پھولوں کی ایک سی ردائیں ہیں
تتلیاں پکڑنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

زلزلے کی صورت میں عشق وار کرتا ہے
سوچنے سمجھنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

بھیڑ وقت لیتی ہے رہنما پرکھنے میں
کاروان بننے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

ہو چمن کے پھولوں کا یا کسی پری وش کا
حسن کے سنورنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

مستقل نہیں امجدؔ یہ دھواں مقدر کا
لکڑیاں سلگنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

duriyan simatne mein der kuchh to lagti hai
ranjishon ke mitne mein der kuchh to lagti hai

hijr ke dorahe par ek pal na thahra wo
raste badalne mein der kuchh to lagti hai

aankh se na hatna tum aankh ke jhapakne tak
aankh ke jhapakne mein der kuchh to lagti hai

hadisa bhi hone mein waqt kuchh to leta hai
bakht ke bigadne mein der kuchh to lagti hai

khushk bhi na ho pai raushnai harfon ki
jaan-e-man mukarne mein der kuchh to lagti hai

fard ki nahin hai ye baat hai qabile ki
gir ke phir sambhalne mein der kuchh to lagti hai

dard ki kahani ko ishq ke fasane ko
dastan banne mein der kuchh to lagti hai

dastaken bhi dene par dar agar na khulta ho
sidhiyan utarne mein der kuchh to lagti hai

khwahishen parindon se lakh milti-julti hon
dost par nikalne mein der kuchh to lagti hai

umr-bhar ki mohlat to waqt hai taaruf ka
zindagi samajhne mein der kuchh to lagti hai

rang yun to hote hain baadalon ke andar hi
par dhanak ke banne mein der kuchh to lagti hai

un ki aur phulon ki ek si ridaen hain
titliyan pakadne mein der kuchh to lagti hai

zalzale ki surat mein ishq war karta hai
sochne samajhne mein der kuchh to lagti hai

bhid waqt leti hai rahnuma parakhne mein
karwan banne mein der kuchh to lagti hai

ho chaman ke phulon ka ya kisi pari-wash ka
husn ke sanwarne mein der kuchh to lagti hai

mustaqil nahin ‘amjad’ ye dhuan muqaddar ka
lakdiyan sulagne mein der kuchh to lagti hai

اپنا تبصرہ بھیجیں