Ajeeb Log Hain

Ajeeb Log Hain

Ajeeb Log Hain
Ham ahl-e-aitbaar kitne bad naseeb log hain

Jo raat jagne ki thi wo sari raat
Khawab dekh dekh kar guzarte rahe
Jo naam bholne ka tha
Us aik naam ko gali gali pukarte rahe
Jo khail jeetne ka tha us ko harte hain
Ajeeb log hain

Hum ahl-e-aitbaar kitne bad naseeb log hain
Kisi se bhi qarz aabro ada na howa
Lahoo luhan sa’aton ka faisla na howa
Baras guzar gaye koi moujza na howa

Wo jal bujha keh aag jis ke shola-e- nafs mein thi
Wo teer kha gaya Kaman jis ke dastaras mein thi
Sipah-e-sar ko faseel-e-shab ka intezaar hai
Kab aayega wo shakhs jis ka sab ko intezaar hai
Ham alh-e-nazar kitne bad naseeb hain
Ajeeb log hain
Hum ahl-e-aitbaar kitne bad naseeb log hain
نظم
عجیب لوگ ہیں
ہم اہل اعتبار کتنے بد نصیب لوگ ہیں
جو رات جاگنے کی تھی وہ ساری رات
خواب دیکھ دیکھ کر گزارتے رہے
جو نام بھولنے کا تھا
اس ایک نام کو گلی گلی پکارتے رہے
جو کھیل جیتنے کا تھا اس کو ہارتے ہیں
عجیب لوگ ہیں

ہم اہلِ اعتبار کتنے بد نصیب لوگ ہیں
کسی سے بھی قرض آبرو ادا نہ ہوا
لہو لہان ساعتوں کا فیصلہ نہ ہوا
برس گزر گئے کوئی معجزہ نہ ہوا

وہ جل بجھا کہ آگ جس کے شعلہء نفس میں تھی
وہ تیر کھا گیا کمان جس کے دسترس میں تھی
سپاہ سرکو فصیلِ شب کا انتظار ہے
کب آئے گا وہ شخص جس کا سب کو انتظار ہے
ہم اہلِ نظر کتنے بد نصیب لوگ ہیں
عجیب لوگ ہیں
ہم اہلِ اعتبار کتنے بد نصیب لوگ ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں