Muhabbat Khud Apne Liye Jism Chunti Hai

Muhabbat Khud Apne Liye Jism Chunti Hai

Muhabbat Khud Apne Liye Jism Chunti Hai
Aur jaal bunti hai un ke liye jo yeh aag apne

Seenon mein bharne ko tayar hoon
Ghuth ke jene se bizar hoon
Muhabbat kabhi ek se ya kabhi ek sao aik
Logon se hone ka ilan ek sath karti hai
Es mein kai umer ki jins ki koi qadar nahi
Muhabbat kisi binch par ek mard aur aurat
Mein khayi hoi ek adhori qasm hai
Mohabbat mein mar jana marna nahi hai
Muhabbat tou khud devtaon ka punar-e-janm hai
Muhabbat kisi laiba ki qalayi se urti hoi chorion ki kank hai
Muhabbat kisi ek murda sitare ko khairat
Mein milne wali chamak hai
Muhabbat peh shak tou khud apni hi hasti peh shak hai
Muhabbat tou mehbob ki qad-o-qamat se janmi hoi alamat hai
Aur taiz barish se sehmay howay hathion par
Barri chatrion ki tarha hai muhabbat
Sard mulkon mein wapis palte howay
Apne zakhmi paron se khala mein laho ki
Lakere banati hoi koonj hai mponj hai
Aur dil ki zamenon ko sairab karti hoi nehar hai qehar hai zehar hai
Jo raagon mein utar kar bandan ko udasi ke us shahr mein
Maar kar khair abad kehti hai
Jo keh alwenon ne bas zehn mein tasawar kya tha
Masjidon mein siparon ko senon mein mehfoz karte howay
Bachion ko khuda se darate howay molvi ka makar hai muhabbat
Kalisaon mein rossi aakhrot ke lakrion se bani hoi
Kursiyon par buzargon ki aakhnon mein marne ka darr hai muhabbat
Muhabbat zaheenon peh khalti hai
Us ko kabhi kund zehnon se koi alaqa nahi
Muhbbat ko kya koi apna ya ghair hai
Us mein aadmi sab kuch loota kar bhi kehta khair hai
نظم
محبت خود اپنےلئے جسم چنتی ہے
اور جال بنتی ہے اُن کے لئے جو یہ آگ اپنے سینوں میں بھرنے کو تیار ہوں
گٹھ کے جینے سے بیزار ہوں
محبت کبھی ایک سے یا کبھی ایک سو ایک لوگوں سے ہونے کا اعلان ایک ساتھ کرتی ہے
اس میں کئی عمر کی جنس کی کوئی قدر نہیں
محبت کسی بنچ پرایک مرد اور عورت میں کھائی ہوئی ایک ادھوری قسم ہے
محبت میں مر جانا مرنا نہیں ہے
محبت تو خود دیواتاؤں کا پنر جنم ہیں
محبت کسی لائبہ کی کلائی سے اُتری ہوئی چوڑیوں کی کنک ہے
محبت کسی ایک مردہ ستارے کو خیرات میں ملنی والے چمک ہے
محبت پہ شک تو خود اپنی ہی ہستی پہ شک ہے
محبت تو محبوب کی قد و قامت سے جنمی ہوئی علامت ہے
اور تیز بارش سے سہمے ہوئے ہاتھیوں پر بڑی چھتریوں کی طرح ہے محبت
سرد ملکوں میں واپس پلٹتے ہوئے
اپنے زخمی پروں سے خلا میں لہو کی لکیرے بناتی ہوئی کونج ہے مونج ہے
اور دل کی زمینوں کو سیراب کرتی ہوئی نہر ہے قہر ہے
زہر ہے
جو رگوں میں اتر کر بدن کو اُداسی کی اُس شہر میں
مارکر خیر آباد کہتی ہے
جو کہ الوینوں نے بس زہن میں تصور کیا تھا
مسجدوں میں سپاروں کو سینوں میں محفوظ کرتے ہوئے
بچیوں کو خدا سے ڈراتے ہوئے مولوی کا مکر ہے محبت
کلیساوں میں روسی آخروٹ کی لکڑیوں سےبنی ہوئی
کرسیوں پر بزرگوں کی آنکھوں میں مرنے کا ڈر ہے محبت
محبت ذہینوں پہ کھلتی ہے
اس کو کبھی کند ذہنوں سے کوئی علاقہ نہیں
محبت کو کیا کہ کوئی اپنا یا غیر ہے
اس میں آدمی سب کچھ لوٹا کر بھی کہتا خیر ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں