Iss Kharabay Mein Kuch Aagay Woh Jaga Aati Hai

Iss Kharabay Mein Kuch Aagay Woh Jaga Aati Hai

Iss Kharabay Mein Kuch Aagay Woh Jaga Aati Hai
Keh jahan khawab bhi tootay tu sada aati hai

Mein ne zindaan mein sekha tha aseeroon se ik ism
Jis ko deewar peh phooknen to hawa aati hai

Khoob ronaq thi inn aankhon mein phir ik khwab aaya
Aisay jaisay kisi basti mein waba aati hai

Larnay jate hain keh kuch mal-e-ghanimat le aayen
Aur phir ghar ki taraf surkh zarah aati hai

Uss ko parday ka tardud nahi karna parta
Aisa chehra hai keh dekhen tu haya aati hai

Theek hai saath raho mere magar aik sawal
Tum ko wehshat se hifazat ki dua aati hai

Sahan mein phirti hai barsoon ki sadhai hoi yaad
Jab bhi puchkar ke kehta hoon keh aa aati hai

Iss kharabay mein kuch aagay woh jaga aati hai
Keh jahan khawab bhi tootay tu sada aati hai
غزل
اِس خرابے میں کچھ آگے وہ جگہ آتی ہے
کہ جہاں خواب بھی ٹوٹے تو صدا آتی ہے 

میں نے زندان میں سیکھا تھا اسیروں سے اک اِسم
جس کو دیوار پہ پھونکیں تو ہوا آتی ہے

خوب رونق تھی اِن آنکھوں میں پھر اک خواب آیا
ایسے جیسے کسی بستی میں وبا آتی ہے

لڑنے جاتے ہیں کہ کچھ مالِ غنیمت لے آئیں
اور پھر گھر کی طرف سرخ زرہ آتی ہے

اُس کو پردے کا تردد نہیں کرنا پڑتا
ایسا چہرہ ہے کہ دیکھیں تو حیا آتی ہے

ٹھیک ہے ساتھ رہو میرے مگر ایک سوال
تم کو وحشت سے حفاظت کی دعا آتی ہے

صحن میں پھرتی ہے برسوں کی سدھائی ہوئی یاد
جب بھی پچکار کے کہتا ہوں کہ “آ” آتی ہے

اِس خرابے میں کچھ آگے وہ جگہ آتی ہے
کہ جہاں خواب بھی ٹوٹے تو صدا آتی ہے ‘

اپنا تبصرہ بھیجیں