Yeh Saat Aath Parosi Kahan Se Aaye Mere

Yeh Saat Aath Parosi Kahan Se Aaye Mere

Yeh Saat Aath Parosi Kahan Se Aaye Mere
Tumhare dil mein to koi nah tha siwa-e-mere

Kisi ne paas bithaya bas aagay yaad nahi
Mujhe to dost wahan se utha ke laye mere

Yeh soch kar na kiye apne dard uss ke supurd
Woh lalchi hai asasay nah baich khaye mere

Idhar kidhar tou naya hai yahan keh pagal hai
Kisi ne kia qissay nahi sunaye mere

Woh aazmaye mere dost ko zaroor magar
Usay kahu keh tareqay nah aazmaye mere

Yeh saat aath parosi kahan se aaye mere
Tumhare dil mein to koi nah tha siwa-e-mere
غزل
یہ سات آٹھ پڑوسی کہاں سے آئے میرے
تمہارے دل میں تو کوئی نہ تھا سواء میرے

کسی نے پاس بٹھایا بس آگے یاد نہیں
مجھے تو دوست وہاں سے اٹھا کے لائے میرے

یہ سوچ کر نا کیے اپنے درد اُس کے سپرد
وہ لالچی ہے اثاثے نہ بیچ کھائے میرے

اِدھر کدھر تو نیا ہے یہاں کہ پاگل ہے
کسی نے کیا قصے نہیں سنائے میرے

وہ آزمائے میرے دوست کو ضرور مگر
اُسے کہو کہ طریقے نہ آزمائے میرے

یہ سات آٹھ پڑوسی کہاں سے آئے میرے
تمہارے دل میں تو کوئی نہ تھا سواء میرے

اپنا تبصرہ بھیجیں