Gharon Mein Sote Sote Log Har Raat Uthne Lagte

غزل
گھروں میں سوتے سوتے لوگ ہر رات اٹھنے لگتے ہیں
تو آبادی میں کیا کیا انقلابات اٹھنے لگتے ہیں

نہیں اٹھتے اگر سوئے ہوئے سلطان تو اک دن
جو قابو میں نہیں آتے وہ حالات اٹھنے لگتے ہیں

جواب آنے میں لگ جاتی ہیں اکثر مدتیں لیکن
جواب آتے ہی سر میں پھر سوالات اٹھنے لگتے ہیں

وہ کرتا ہے نہایت بادل نا خواستہ رخصت
جب اس کے پاس سے ہم بے مدارات اٹھنے لگتے ہیں

کوئی صدمہ نہیں اٹھتا شروع عشق میں تاہم
بتدریج آدمی سے سارے صدمات اٹھنے لگتے ہیں

شعورؔ اپنے لبوں پر تم خوشی سے مہر لگنے دو
دبانے سے تو افکار و خیالات اٹھنے لگتے ہیں
Ghazal
Gharon Mein Sote Sote Log Har Raat Uthne Lagte Hain
To aabaadi mein kya kya inqilabaat uthne lagte hain

Nahin uthte agar soe hue sultan to ek din
Jo qabu mein nahin aate wo haalat uthne lagte hain

Jawab aane mein lag jati hain aksar muddaten lekin
Jawab aate hi sar mein phir sawalat uthne lagte hain

Wo karta hai nihayat ba-dil-e-na-khwasta rukhsat
Jab us ke pas se hum be-mudaraat uthne lagte hain

Koi sadma nahin uthta shuru-e-ishq mein taham
Ba-tadrij aadmi se sare sadmat uthne lagte hain

‘Shuur’ apne labon par tum khushi se muhr lagne do
Dabane se to afkar-o-khayalat uthne lagte hain

اپنا تبصرہ بھیجیں