Mulk Sukhan Mein Dard Ki Daulat| Ghazal Poetry

Mulk Sukhan Mein Dard Ki Daulat| Ghazal Poetry

Mulk Sukhan Mein Dard Ki Daulat Ko Kya Howa
Aye shahr meer teri riwayat ko kya howa

Hum tou saada ke banda zar thay hamara kya
Naam aawar en uhad-e-baghawat ko kya howa

Gird-o-ghubaar kocha shohrat mein aake dekh
Asood gaan kanj qanaat ko kya howa

Ghar se nikal ke bhi wohi taza hoo ka khauf
Misaq hijar teri basharat ko kya howa

Mulk sukhan mein dard ki daulat ko kya howa
Aye shahr meer teri riwayat ko kya howa
غزل
ملک سخن میں درد کی دولت کو کیا ہوا
اے شہر میر تیری روایت کو کیا ہوا

ہم تو سدا کے بندہ زر تھے ہمارا کیا
نام آور ان عہد بغاوت کو کیا ہوا

گرد و غبار کوچہ شہرت میں آکے دیکھ
آسودگان کنج قناعت کو کیا ہوا

گھر سے نکل کے بھی وہی تازہ ہو کا خوف
میثاق ہجر تیری بشارت کو کیا ہوا

ملک سخن میں درد کی دولت کو کیا ہوا
اے شہر میر تیری روایت کو کیا ہوا

اپنا تبصرہ بھیجیں