Aur Phir Aik Din Bethay Bethay Mujhy Apni Dunya

Ghazal
Aur Phir Aik Din Bathe Bathe Mujhe Apni Dunya Buri Lag Gai
Jis ko abad karte hoe mere maa baap ki zindagi lag gai

Sab sawalat azbar thay jo ishq ke baab main mujh se puche gae
Per sifaarish pe es mahkame main kisi aur ki nokari lag gai

Kia karuun uski aankhon ke age andhera nahi dekh sakta tha main
Ap kahte rahe keh galat admi per meri roshni lag gai
غزل
اور پھر ایک دن بیٹھے بیٹھے مجھے اپنی دنیا بُری لگ گئی
جس کو آباد کرتے ہوئے میرے ماں باپ کی زندگی لگ گئی

سب سوالات ازبر تھے جو عشق کے باب میں مجھ سے پوچھے گۓ
پر سفارش پے اس محکمے میں کسی اور کی نوکری لگ گئی

کیا کروں اُس کی آنکھوں کے آگے اندھیرا نہیں دیکھ سکتا تھا میں
آپ کہتے رہے کہ غلط آدمی پر میری روشنی لگ گئی

اپنا تبصرہ بھیجیں