https://fb.watch/ht89WLBlqN/

Kamal Zabt Ko Khud Bhi Tou Aazmaon Gi

Kamal Zabt Ko Khud Bhi Tou Aazmaon Gi
Mein apne hath se uss ki dulhan sajaon gi

Supard kar ke usay chandni ki hathon mein
Mein apne ghar ke andheron ko lout aaon gi

Badan karb ko woh bhi samjh nah paye ga
Mein dil mein rowon gi aankhon mein muskuraon gi

Woh kiya giya keh rafaqat ke sare lutf gaye
Mein kis se rooth sakun gi kise manaon gi

Ab uss ka fan to kisi aur se howa mansoob
Mein kis ki nazam akele mein gungunaon gi

Woh aik rishta be naam bhi nahi lekin
Mein ab bhi uss ke isharon peh sar jhukaon gi

Bicha diya tha gulabon ke saath apna wajood
Woh so ke uthe to khwabon ki raakh uthaon gi

Samaton mein ghanne junglon ki saansen hain
Mein ab kabhi teri aawaz sun nah paon gi

Jawaz dhoond raha tha nai mohabbat ka
Woh kehh raha tha keh mein uss ko bhol jaon gi

Kamal zabt ko khud bhi tou aazmaon gi
Mein apne hath se uss ki dulhan sajaon g
غزل
کمال ضبط کو خود بھی تو آزماؤں گی
میں اپنے ہاتھ سے اُس کی دلہن سجاؤں گی

سپرد کر کے اُسے چاندنی کے ہاتھوں میں
میں اپنے گھر کے اندھیروں کو لوٹ آؤں گی

بدن کرب کو وہ بھی سمجھ نہ پائے گا
میں دل میں روؤں گی آنکھوں میں مسکراوں گی

وہ کیا گیا کہ رفاقت کے سارے لطف گئے
میں کس سے روٹھ سکوں گی کسے مناؤں گی

اب اُس کا فن تو کسی اور سے ہوا منسوب
میں کس کی نظم اکیلے میں گنگناؤں گی

وہ ایک رشتہ بے نام بھی نہیں لیکن
میں اب بھی اُس کے اِشاروں پہ سر جھکاؤں گی

بچھا دیا تھا گلابوں کے ساتھ اپنا وجود
وہ سو کے اُٹھے تو خوابوں کی راکھ اُٹھاؤں گی

سماعتوں میں گھنے جنگلوں کی سانسیں ہیں
میں اب کبھی تری آواز سن نہ پاؤں گی

جواز ڈھونڈ رہا تھا نئی محبت کا
وہ کہہ رہا تھا کہ میں اُس کو بھول جاؤں گی

کمال ضبط کو خود بھی تو آزماؤں گی
میں اپنے ہاتھ سے اُس کی دلہن سجاؤں گی

اپنا تبصرہ بھیجیں