Dhundte Kya Ho In Aankhon Mein Kahani Meri

غزل
ڈھونڈتے کیا ہو ان آنکھوں میں کہانی میری
خود میں گم رہنا تو عادت ہے پرانی میری
 
بھیڑ میں بھی تمہیں مل جاؤں گا آسانی سے
کھویا کھویا ہوا رہنا ہے نشانی میری
 
میں نے اک بار کہا تھا کہ بہت پیاسا ہوں
تب سے مشہور ہوئی تشنہ دہانی میری
 
یہی دیوار و در و بام تھے میرے ہم راز
انہی گلیوں میں بھٹکتی تھی جوانی میری
 
تو بھی اس شہر کا باسی ہے تو دل سے لگ جا
تجھ سے وابستہ ہے اک یاد پرانی میری
 
کربلا دشت محبت کو بنا رکھا ہے
کیا غزل گوئی ہے کیا مرثیہ خوانی میری
 
دھیمے لہجے کا سخنور ہوں نہ صہبا ہوں نہ جوش
میں کہاں اور کہاں شعلہ بیانی میری
Ghazal
Dhundte Kya Ho In Aankhon Mein Kahani Meri
Khud Mein Gum Rahna To Aadat Hai Purani Meri

Bhid Mein Bhi Tumhein Mil Jaunga Aasani Se
Khoya Khoya Hua Rahna Hai Nishani Meri

Main Ne Ek Bar Kaha Tha Ki Ahut Pyasa Hun
Tab Se Mashhur Hui Tishna-Dahani Meri

Yahi Diwar-O-Dar-O-Baam The Mere Hamraaz
Inhi Galiyon Mein Bhatakti Thi Jawani Meri

Tu Bhi Is Shahr Ka Basi Hai To Dil Se Lag Ja
Tujh Se Wabasta Hai Ek Yaad Purani Meri

Karbala Dasht-E-Mohabbat Ko Bana Rakkha Hai
Kya Ghazal-Goi Hai Kya Marsiya-Khwani Meri

Dhime Lahje Ka Sukhnawar Hun Na Sahba Hun Na Josh
Main Kahan Aur Kahan Shoala-Bayani Meri

اپنا تبصرہ بھیجیں