Jo Le Ke Un Ki Tamanna Ke Khwab Niklega

Jo Le Ke Un Ki Tamanna Ke Khwab Niklega

غزل
جو لے کے ان کی تمنا کے خواب نکلے گا
بہ عجز شوق بہ حال خراب نکلے گا

جو رنگ بانٹ کے جاتا ہے تنکے تنکے کو
عدو زمیں کا یہی آفتاب نکلے گا

بھری ہوئی ہے کئی دن سے دھند گلیوں میں
نہ جانے شہر سے کب یہ عذاب نکلے گا

جو دے رہے ہو زمیں کو وہی زمیں دے گی
ببول بوئے تو کیسے گلاب نکلے گا

ابھی تو صبح ہوئی ہے شب تمنا کی
بہیں گے اشک تو آنکھوں سے خواب نکلے گا

مرے گناہ بہت ہیں مگر تقابل میں
اسی کا لطف و کرم بے حساب نکلے گا

ملا کسی کو نہ دانشؔ کچھ آرزو کے خلاف
پس فنا بھی یہی انتخاب نکلے گا
 
Ghazal
Jo Le Ke Un Ki Tamanna Ke Khwab Niklega
Ba-ijz-o-shauq ba-haal-e-kharab niklega

Jo rang banT ke jata hai tinke tinke ko
Adu zamin ka yahi aaftab niklega

Bhari hui hai kai din se dhund galiyon mein
Na jaane shahr se kab ye azab niklega

Jo de rahe ho zamin ko wahi zamin degi
Babul boe to kaise gulab niklega

Abhi to subh hui hai shab-e-tamanna ki
Bahenge ashk to aankhon se khwab niklega

Mere gunah bahut hain magar taqabul mein
Usi ka lutf-o-karam be-hisab niklega

Mila kisi ko na ‘danish’ kuchh aarzu ke khilaf
Pas-e-fana bhi yahi intikhab niklega

اپنا تبصرہ بھیجیں