Khalq Ne Ek Manzar Nahi| Ghazal Iftikhar Arif

Khalq Ne Ek Manzar Nahi| Ghazal Iftikhar Arif

Khalq Ne Ek Manzar Nahi Dekha Bahut Dino Se
Nok sanaa peh sar nahi dekha bahut dino se

Pathar peh sar rakh kar sonay wale dekhe
Hathon mein pathar nahi dekha bahut dino se

Qatil jis ki zad se khud mehfooz reh sakay
Aisa koi khanjar nahi dekha bahut dino se

Apne hi khaimon par jo shab khoon na mare
Aisa koi Lashkar nahi dekha bahut dino se

Shaakh barida khuli fizza se pooch rahi hai
Koi shikasta par nahi dekha bahut dino se

Zindaan-e-ahl junoon ko shayad raas aagya
Diwaaron mein dard nahi dekha bohat dino se

Khaak urane wale logon ki basti mein
Koi soraat-gar nahi dekha bahut dino se

Sachay sayen hamre hazrat meher ali shah
Baba hum ne ghar nahi dekha bohat dino se

Khalq ne ek manzar nahi dekha bahut dinoo se
Nok sanaa peh sar nahi dekha bahut dino se
غزل
خلق نے اک منظر نہیں دیکھا بہت دنوں سے
نوک سناں پہ سر نہیں دیکھا بہت دنوں سے

پتھر پہ سر رکھ کر سونے والے دیکھے
ہاتھوں میں پتھر نہیں دیکھا بہت دنوں سے
 
قاتل جس کی زد سے خود محفوظ رہ سکے
ایسا کوئی خنجر نہیں دیکھا بہت دنوں سے

اپنے ہی خیموں پر جو شب خون نہ مارے
ایسا کوئی لشکر نہیں دیکھا بہت دنوں سے

شاخ بریدہ کھلی فضا سے پوچھ رہی ہے
کوئی شکستہ پر نہیں دیکھا بہت دنوں سے

زنداں اہل جنوں کو شاید راس آگیا
دیواروں میں در نہیں دیکھا بہت دنوں سے

خاک اُڑانے والے لوگوں کی بستی میں
کوئی صورت گر نہیں دیکھا بہت دنوں سے

سچے سائیں ہمارے حضرت مہر علی شاہ
بابا ہم نے گھر نہیں دیکھا بہت دنوں سے

خلق نے اک منظر نہیں دیکھا بہت دنوں سے
نوک سناں پہ سر نہیں دیکھا بہت دنوں سے
Read More Click here

اپنا تبصرہ بھیجیں