O Mere Masroof Khuda

نظم
او میرے مصروف خدا
اپنی دنیا دیکھ ذرا

اتنی خلقت کے ہوتے
شہروں میں ہے سناٹا

جھونپڑی والوں کی تقدیر
بجھا بجھا سا ایک دیا

خاک اڑاتے ہیں دن رات
میلوں پھیل گئے صحرا

زاغ و زغن کی چیخوں سے
سونا جنگل گونج اٹھا

سورج سر پہ آ پہنچا
گرمی ہے یا روز جزا

پیاسی دھرتی جلتی ہے
سوکھ گئے بہتے دریا

فصلیں جل کر راکھ ہوئیں
نگری نگری کال پڑا
Nazam
O Mere Masroof Khuda
Apni duniya dekh zara

Itni khilqat ke hote
Shahron mein hai sannata

Jhonpadi walon ki taqdeer
Bujha bujha sa ek diya

Khaak udate hain din raat
Milon phail gay sahra

Zagh o zaghan ki chikhon se
Sona jangal gunj utha

Suraj sar pe aa pahuncha
Garmi hai ya roz-e-jaza

Pyasi dharti jalti hai
Sukh gae bahte dariya

Faslen jal kar rakh huin
Nagri nagri kal pada

اپنا تبصرہ بھیجیں