Khirad Ke Paas Khabar Ke Siwa Kuch Aur Nahi

خرد کے پاس خبر کے سوا کچھ اور نہیں
ترا علاج نظر کے سوا کچھ اور نہیں
ہر اک مقام سے آگے مقام ہے تیرا
حیات ذوق سفر کے سوا کچھ اور نہیں
گراں بہا ہے تو حفظ خودی سے ہے ورنہ
گہر میں آب گہر کے سوا کچھ اور نہیں
رگوں میں گردش خوں ہے اگر تو کیا حاصل
حیات سوز جگر کے سوا کچھ اور نہیں
عروس لالہ مناسب نہیں ہے مجھ سے حجاب
کہ میں نسیم سحر کے سوا کچھ اور نہیں
جسے کساد سمجھتے ہیں تاجران فرنگ
وہ شے متاع ہنر کے سوا کچھ اور نہیں
بڑا کریم ہے اقبال بے نوا لیکن
عطائے شعلہ شرر کے سوا کچھ اور نہیں
Khirad Ke Paas Khabar Ky Siwa Kuch Aur Nahi
Tera Ilaj Nazar Ky Siwa Kuch Aur Nahi

Har Maqam Se Agy Maqam Hai Tera
Hayat Zok.e.Safar Ky Siwa Kuch Aur Nahi

Giran Baha Hai To Hif Khudi Se Hai Warna
Gohr Mein Ab.e.Gohr Ky Siwa Kuch Aur Nahi

Ragon Mein Gardish.e.Khoon Hai Agar To Kya Hasil
Hayat Soz Jigar Ky Siwa Kuch Aur Nahi

Aroos.o.Lala Munasib Nahi Hai Mujh Se Hijab
Keh Main Naseem.e.Sahir Ky Siwa Kuch Aur Nahi

Jise Qasad Smjhty Hain Tajran.e.Firang
Who Shay Mata.e.Hunar Ky Siwa Kuch Aur Nahi

Bara Kareem Hai Iqbal Be Nawa Laikin
Ata.e.Shola Sharar Ky Siwa kuch Aur Nai

اپنا تبصرہ بھیجیں