Mujh Ko Darwazay Peh Hi Rok Liya Jata Hai

Mujh Ko Darwazay Peh Hi Rok Liya Jata Hai

Mujh Ko Darwazay Peh Hi Rok Liya Jata Hai
Mere aane se bhala aap ka kiya jata hai

Ashk girne se koi lafaz nah mit jaye kahin
Uss ki tehreer ko ajlat mein parha jata hai

To agar jane laga hai tou palat kar mat dekh
Mout likh kar tou qalam tor diya jata hai

Meri liknat peh taras khate howay dekh mujhe
Kitni mushkil se tera naam liya jata hai

Tum musawwir ho udhar dekh ke batlao zara
Aisay manzar ko bhi tasweer kiya jata hai

Tujh ko batlata magar sharm bahut aati hai
Teri tasweer se jo kaam liya jata hai

Mujh ko darwazay peh hi rok liya jata hai
Mere aane se bhala aap ka kiya jata hai
غزل
مجھ کو دروازے پہ ہی روک لیا جاتا ہے
میرے آنے سے بھلا آپ کا کیا جاتا ہے

اشک گرنے سے کوئی لفظ نہ مٹ جائے کہیں
اُس کی تحریر کو عجلت میں پڑھا جاتا ہے

تُو اگر جانے لگا ہے تو پلٹ کر مت دیکھ
موت لکھ کر تو قلم توڑ دیا جاتا ہے

میری لکنت پہ ترس کھاتے ہوئے دیکھ مجھے
کتنی مشکل سے تیرا نام لیا جاتا ہے

تم مصور ہو اُدھر دیکھ کے بتلاؤ ذرا
ایسے منظر کو بھی تصویر کیا جاتا ہے

تجھ کو بتلاتا مگر شرم بہت آتی ہے
تیری تصویر سے جو کام لیا جاتا ہے

مجھ کو دروازے پہ ہی روک لیا جاتا ہے
میرے آنے سے بھلا آپ کا کیا جاتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں