Kuch Zarorat Se Kam Kiya Geya Hai

Kuch Zarorat Se Kam Kiya Geya Hai

Kuch Zarorat Se Kam Kiya Geya Hai
Tere jane ka gham kiya geya hai

Ta qayamat hare bhare rahenge
En darakhton pe dam kiya geya hai

Es liye roshni mein thandak hai
Kuch chiraghon ko nam kiya geya hai

Kiya yeh kam hai keh aakhri bossa
Es jabeen par raqam kiya geya hai

Panion ko bhi khawab aane lage
Ashk darya mein zam kiya geya hai

Un aankhon ka tazkira kar ke
Meri aankhon ko nam kiya geya hai

Dhool mein aat gaye hain sare ghazaal
Itni shiddat se ram kiya geya hai

Kuch zarorat se kam kiya geya hai
Tere jane ka gham kiya geya hai
غزل
کچھ ضرورت سے کم کیا گیا ہے
تیرے جانے کا غم کیا گیا ہے

تا قیامت ہرے بھرے رہیں گے
ان درختوں پہ دم کیا گیا ہے

اس لیے روشنی میں ٹھنڈک ہے
کچھ چراغوں کو نم کیا گیا ہے

کیا یہ کم ہے کہ آخری بوسہ
اس جبیں پر رقم کیا گیا ہے

پانیوں کو بھی خواب آنے لگے
اشک دریا میں ضم کیا گیا ہے

ان کی آنکھوں کا تذکرہ کر کے
میری آنکھوں کو نم کیا گیا ہے

دھول میں اٹ گئے ہیں سارے غزال
اتنی شدت سے رم کیا گیا ہے

کچھ ضرورت سے کم کیا گیا ہے
تیرے جانے کا غم کیا گیا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں