Bahaar Aai Hai Phir Jhum Kar Sahab Utha

Bahaar Aai Hai Phir Jhum Kar Sahab Utha

غزل
بہار آئی ہے پھر جھوم کر سحاب اٹھا
کہاں ہے مطرب رنگیں نوا رباب اٹھا

جواز مے کا مخالف اگر ہے اے واعظ
کہاں لکھا ہے دیکھ لا اٹھا کتاب اٹھا

فضا میں کھول دیئے ہیں گھٹاؤں نے گیسو
نہیں ہے جام نہ ہو شیشہ شراب اٹھا

ہر اک پھول میں رقصاں ہے کائنات جمال
بہار آئی کہ ہے اک محشر شباب اٹھا

کہاں کے دیر و حرم جستجوئے جلوہ گر
یہی نقاب ہے آنکھوں سے یہ نقاب اٹھا

نسیم صبح سے شاخیں ملی تو مین سمجھا
کہ حسن عالم طفلی میں نیم خواب اٹھا

لباس ماہ میں احسان دیکھ کون آیا
نگاہ سائے فلک خانماں خراب اٹھا
 
 Ghazal
Bahaar Aai Hai Phir Jhum Kar Sahab Utha
Kahan hai mutrib-e-rangin-nawa rabab utha

Jawaz mai ka mukhalif agar hai ai waiz
Kahan likha hai dikha la utha kitab utha

Faza mein khol diye hain ghataon ne gesu
Nahin hai jam na ho shisha-e-sharab utha

Har ek phool mein raqsan hai kaenat-e-jamal
Bahaar aai keh hai ek mahshar-e-shabab utha

Kahan ke dair-o-haram justaju-e-jalwa-gar
Yahi naqab hai aankhon se ye naqab utha

Nasim-e-subh se shakhen milin to main samjha
Keh husn-e-alam tifli mein nim-khwab utha

Libas-e-mah mein ‘ehsan’ dekh kaun aaya
Nigah-e-su-e-falak khanuman-kharab utha

اپنا تبصرہ بھیجیں