Jo Zindagi Ko Bohat Khushnuma Bata Raha Hai

Jo Zindagi Ko Bohat Khushnuma Bata Raha Hai

Jo Zindagi Ko Bohat Khushnuma Bata Raha Hai
Yaqeen kar woh mohabbat mein mubtala raha hai

Zarooratan sabhi karte rahe hain firqay waza
Har aik shakhs ka apna yahan khuda raha hai

Mein ab ki bar bhi nakaam hone wali hoon
Mera yeh waar bhi mujh par palat ke aa raha hai

Mera qayafah ghalat ho khuda kare lekin
Woh kaf shanaas koi baat to chupa raha hai

Abhi tu zindagi se munqata hai rah-o-rasam
Bhalay dinon mein mera uss se rabtaa raha hai

Koi sikhaye bhi aadab-e-guftagu uss ko
Yeh shahr apni rawadaariyan ganwa raha hai

Jo zindagi ko bohat khushnuma bata raha hai
Yaqeen kar woh mohabbat mein mubtala raha hai
غزل
جو زندگی کو بہت خوشنما بتا رہا ہے
یقین کر وہ محبت میں مبتلا رہا ہے

ضرورتاً سبھی کرتے رہے ہیں فرقے وضع
ہر ایک شخص کا اپنا یہاں خدا رہا ہے

میں اب کی بار بھی ناکام ہونے والی ہوں
مرا یہ وار بھی مجھ پر پلٹ کے آرہا ہے

مرا قیافہ غلط ہو خدا کرے لیکن
وہ کف شناس کوئی بات تو چھپا رہا ہے

ابھی تو زندگی سے منقطع ہے راہ و رسم
بھلے دنوں میں مرا اُس سے رابطہ رہا ہے

کوئی سکھائے بھی آدابِ گفتگو، اُس کو
یہ شہر اپنی رواداریاں گنوا رہا ہے

جو زندگی کو بہت خوشنما بتا رہا ہے
یقین کر وہ محبت میں مبتلا رہا ہے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں