Sham Aai Teri Yaadon Ke Sitare Nikle

غزل
شام آئی تری یادوں کے ستارے نکلے
رنگ ہی غم کے نہیں نقش بھی پیارے نکلے

ایک موہوم تمنا کے سہارے نکلے
چاند کے ساتھ ترے ہجر کے مارے نکلے

کوئی موسم ہو مگر شان خم و پیچ وہی
رات کی طرح کوئی زلف سنوارے نکلے

رقص جن کا ہمیں ساحل سے بہا لایا تھا
وہ بھنور آنکھ تک آئے تو کنارے نکلے

وہ تو جاں لے کے بھی ویسا ہی سبک نام رہا
عشق کے باب میں سب جرم ہمارے نکلے

عشق دریا ہے جو تیرے وہ تہی دست رہے
وہ جو ڈوبے تھے کسی اور کنارے نکلے

دھوپ کی رت میں کوئی چھاؤں اگاتا کیسے
شاخ پھوٹی تھی کہ ہم سایوں میں آرے نکلے
Ghazal
Sham Aai Teri Yaadon Ke Sitare Nikle
Rang hi gham ke nahin naqsh bhi pyare nikle

Ek mauhum tamanna ke sahaare nikle
Chand ke sath tere hijr ke mare nikle

Koi mausam ho magar shan-e-kham-o-pech wahi
Raat ki tarah koi zulf sanware nikle

Raqs jin ka hamein sahil se baha laya tha
Wo bhanwar aankh tak aae to kinare nikle

Wo to jaan le ke bhi waisa hi subuk-nam raha
Ishq ke bab mein sab jurm hamare nikle

Ishq dariya hai jo tere wo tahi-dast rahe
Wo jo dube the kisi aur kinare nikle

Dhup ki rut mein koi chhanw ugata kaise
Shakh phuti thi ki ham-sayon mein aare nikle

اپنا تبصرہ بھیجیں