Taqseem Nah Ho Jaye Yeh Ghar Chaar Dharon

Taqseem Nah Ho Jaye Yeh Ghar Chaar Dharon

Taqseem Nah Ho Jaye Yeh Ghar Chaar Dharon Mein
Ranjish hai kai din se koi ghar ke baron mein

Uss pair ki chhaon mein badan neela para hai
Tum zeher ulat aaye thay kal jis ki jaron mein

Gaon ki mohabbat hai jo pani mein ghali hai
Sondhi si mahek hai mere miti ke gharon mein

Aik ronq-e-bazar thi jo kha gai wehshat
Yaranay hoye dafan dukanon ke tharon mein

Ik bar koi hath unhein chho kay gaya tha
Ab ishq khankta hai kalai ke karon mein

Taqseem nah ho jaye yeh ghar chaar dharon mein
Ranjish hai kai din se koi ghar ke baron mein
غزل
تقسیم نہ ہو جائے یہ گھر چار دھڑوں میں
رنجش ہے کئی دن سے کوئی گھر کے بڑوں میں

اُس پیڑ کی چھاؤں میں بدن نیلا پڑا ہے
تم زہر الٹ آئے تھے کل جس کی جڑوں میں

گاؤں کی محبت ہے جو پانی میں گھلی ہے
سوندھی سی مہک ہے مرے مٹی کے گھڑوں میں

اک رونقِ بازار تھی جو کھا گئی وحشت
یارانے ہوئے دفن دکانوں کے تھڑوں میں

اک بار کوئی ہاتھ اُنہیں چھو کے گیا تھا
اب عشق کھنکتا ہے کلائی کے کڑوں میں

تقسیم نہ ہو جائے یہ گھر چار دھڑوں میں
رنجش ہے کئی دن سے کوئی گھر کے بڑوں میں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں