Waqt Rukhsat Aa Gaya Dil Phir Bhi Ghabraya Nahi

Waqt Rukhsat Aa Gaya Dil Phir Bhi Ghabraya Nahi

Waqt Rukhsat Aa Gaya Dil Phir Bhi Ghabraya Nahi
Uss ko hum kia khoyein gay jis ko kabhi paya nahi

Zindagi jitni bhi hai ab mustaqil sahra mein hai
Aur uss sahra mein tere dour tak saya nahi

Meri qismat mein faqt dard teh saghir hi hai
Awal shab jaam meri simat woh laya nahi

Teri aankhon ka bhi kuchh halka gulabi rang tha
Zehn ne mere bhi ab ke dil ko samjhaya nahi

Kaan bhi khali hain mere aur donon hath bhi
Ab ke fasal gul ne mujh ko phool pehnaya nahi

Waqt rukhsat aa gaya dil phir bhi ghabraya nahi
Uss ko hum kia khoyein gay jis ko kabhi paya nahi
غزل
وقت رخصت آ گیا دل پھر بھی گھبرایا نہیں
اُس کو ہم کیا کھوئیں گے جس کو کبھی پایا نہیں

زندگی جتنی بھی ہے اب مستقل صحرا میں ہے
اور اُس صحرا میں تیرا دور تک سایا نہیں

میری قسمت میں فقط درد تہہ ساغر ہی ہے
اول شب جام میری سمت وہ لایا نہیں

تیری آنکھوں کا بھی کچھ ہلکا گلابی رنگ تھا
ذہن نے میرے بھی اب کے دل کو سمجھایا نہیں

کان بھی خالی ہیں میرے اور دونوں ہاتھ بھی
اب کے فصل گل نے مجھ کو پھول پہنایا نہیں

وقت رخصت آ گیا دل پھر بھی گھبرایا نہیں
اُس کو ہم کیا کھوئیں گے جس کو کبھی پایا نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں