Na Siyo Hont Na Khwabon Mein Sada Do Hum Ko

شاعر:احسان دانش
غزل
نہ سیو ہونٹ نہ خوابوں میں صدا دو ہم کو
مصلحت کا یہ تقاضا ہے بھلا دو ہم کو

جرم سقراط سے ہٹ کر نہ سزا دو ہم کو
زہر رکھا ہے تو یہ آب بقا دو ہم کو

بستیاں آگ میں بہہ جائیں کہ پتھر برسیں
ہم اگر سوئے ہوئے ہیں تو جگا دو ہم کو

ہم حقیقت ہیں تو تسلیم نہ کرنے کا سبب
ہاں اگر حرف غلط ہیں تو مٹا دو ہم کو

خضر مشہور ہو الیاس بنے پھرتے ہو
کب سے ہم گم ہیں ہمارا تو پتا دو ہم کو

زیست ہے اس سحر و شام سے بیزار و زبوں
لالہ و گل کی طرح رنگ قبا دو ہم کو

شورش عشق میں ہے حسن برابر کا شریک
سوچ کر جرم تمنا کی سزا دو ہم کو

جرأت لمس بھی امکان طلب میں ہے مگر
یہ نہ ہو اور گناہ گار بنا دو ہم کو

کیوں نہ اس شب سے نئے دور کا آغاز کریں
بزم خوباں سے کوئی نغمہ سنا دو ہم کو

مقصد زیست غم عشق ہے صحرا ہو کہ شہر
بیٹھ جائیں گے جہاں چاہو بٹھا دو ہم کو

ہم چٹانیں ہیں کوئی ریت کے ساحل تو نہیں
شوق سے شہر پناہوں میں لگا دو ہم کو

بھیڑ بازار سماعت میں ہے نغموں کی بہت
جس سے تم سامنے ابھرو وہ صدا دو ہم کو

کون دیتا ہے محبت کو پرستش کا مقام
تم یہ انصاف سے سوچو تو دعا دو ہم کو

آج ماحول کو آرائش جاں سے ہے گریز
کوئی دانشؔ کی غزل لا کے سنا دو ہم کو
 

Ghazal

Na Siyo Hont Na Khwabon Mein Sada Do Hum Ko
Maslahat ka ye taqaza hai bhula do hum ko

Jurm-e-suqraat se hat kar na saza do hum ko
Zahr rakkha hai to ye aab-e-baqa do hum ko

Bastiyan aag mein bah jaen ki patthar barsen
Hum agar soe hue hain to jaga do hum ko

Hum haqiqat hain to taslim na karne ka sabab
Han agar harf-e-ghalat hain to mita do hum ko

Khizr mashhur ho ilyas bane phirte ho
Kab se hum gum hain hamara to pata do hum ko

Zist hai is sahar-o-sham se bezar o zubun
Lala-o-gul ki tarah rang-e-qaba do hum ko

Shorish-e-ishq mein hai husn barabar ka sharik
Soch kar jurm-e-tamanna ki saza do hum ko

Jurat-e-lams bhi imkan-e-talab mein hai magar
Ye na ho aur gunahgar bana do hum ko

Kyun na us shab se nae daur ka aaghaz karen
Bazm-e-khuban se koi naghma suna do hum ko

Maqsad-e-zist gham-e-ishq hai sahra ho ki shahr
Baith jaenge jahan chaho bitha do hum ko

Hum chatanen hain koi ret ke sahil to nahi
Shauq se shahr-panahon mein laga do hum ko

Bhid bazar-e-samaat mein hai naghmon ki bahut
Jis se tum samne ubhro wo sada do hum ko

Kaun deta hai mohabbat ko parastish ka maqam
Tum ye insaf se socho to dua do hum ko

Aaj mahaul ko aaraish-e-jaan se hai gurez
Koi ‘danish’ ki ghazal la ke suna do hum ko

اپنا تبصرہ بھیجیں