Jidhar Jatay Hain Sab Jana Udhar Acha Nahi Lagta

Ghazal
Jidhar Jatay Hain Sab Jana Udhar Acha Nahi Lagta
Mujhe pamall raaston ka saffar acha nahi lagta

Galat baaton ko sunna hami bhar lana
Bhout faiday hain es mein magar acha nahi lagta

Mujhe dushman se bhi khudari ki umeed rehti hai
Kisi ka bhi ho sar qadmo mein sar acha nahi lagta

Bulandi per inhain matti ki khushboo tak nahi aati
Yeh wo shakhayen hain jin ko shajar acha nahi lagta

Yeh kyu baqi rahe atish zano yeh bhi jala dalo
Sab be ghar hun mera ghar ho acha nahi lagta
Jidher jatay hain sab jana udhar acha nahi lagta
غزل
جدھر جاتے ہیں سب جانا اُدھر اچھا نہیں لگتا
مجھے پامال رستوں کا سفر اچھا نہیں لگتا

غلط باتوں کو خاموشی سے سننا حامی بھر لینا
بہت ہیں فائدے اس میں مگر اچھا نہیں لگتا

مجھے دشمن سے بھی خودداری کی امید رہتی ہے
کسی کا بھی ہو سر قدموں میں سر اچھا نہیں اچھا نہیں لگتا

بلندی پر انہیں مٹی کی خوشبو تک نہیں آتی
یہ وہ شاخیں ہیں جن کو شجر اچھا نہیں لگتا

یہ کیوں باقی رہے آتش زنو یہ بھی جلا ڈالو
سب بے گھر ہوں اور میرا ہو گھر اچھا نہیں لگتا
جدھر جاتے ہیں سب جانا اُدھر اچھا نہیں لگتا

اپنا تبصرہ بھیجیں