Ki Lakh Magar Aik Bhi Kaam| Ehsan Danish Poetry

Ki Lakh Magar Aik Bhi Kaam| Ehsan Danish Poetry

Ki Lakh Magar Aik Bhi Kaam Aai Nah Tadbeer
Majboor hoon majboor yeh taqdeer hai tadqeer

Is sanole chehre mein taqadus ki zaya hai
Yeh pekar affat hai yeh fanoos-e-haya hai

Us ke liye chakki bhi nai cheez nahi hai
Beti hai miri dukhtar parvaiz nahi hai

Ghurbat mein yeh paida hoi ghurbat mein pali hai
Khud dari-o-tehzeeb ke sanchey mein dhali hai

Zinhar yeh ziwar ki tamanna nah karege
Aisa nah karegi kabhi aisa nah karegi

Shikwa usay taqdeer ka karna nahi aata
Adarak ki sarhad se guzarna nahi aata

Hai sabar ki khugar usay faqoon ki hai adat
Maan bah se pai hai waris mein qanaat

Uski bhi khushi hogi tumhari jo raza ho
Tum is ke liye dosray darje peh khuda ho

Phir aa ke kaha beti se yeh naram zuban se
Bachi meri rukhsat hai tou ab baap se maan se

Aye jaan-e-pidar dekh wafadar hi rehna
Aaye jo qayamat bhi tou hans khail ke sehna

Ki lakh magar aik bhi kaam aai nah tadbeer
Majboor hoon majboor yeh taqdeer hai tadqeer
نظم
کی لاکھ مگر ایک بھی کام ائی نہ تدبیر
مجبور ہوں مجبور یہ تقدیر ہے تقدیر

اس سانولے چہرے میں تقدس کی ضیا ہے
یہ پیکرِ عفت ہے یہ فانوسِ حیا ہے

اس کے لئے چکی بھی نئی چیز نہیں ہے
بیٹی ہے مری دختر پرویز نہیں ہے

غربت میں یہ پیدا ہوئی غربت میں پلی ہے
خود داری و تہذیب کے سانچے میں ڈھلی ہے

زنہار یہ زیور کی تمنا نہ کرے گی
ایسا نہ کرے گی کبھی ایسا نہ کرے گی

شکوہ اسے تقدیر کا کرنا نہیں آتا
ادراک کی سرحد سے گزرنا نہیں آتا

ہے صبر کی خوگر اسے فاقوں کی ہے عادت
ماں باہ سے پائی ہے وراثت میں قناعت

اسکی بھی خوشی ہوگی تمہاری جو رضا ہو
تم اس کے لئے دوسرے درجے پہ خدا ہو

پھر آ کے کہا بیٹی سے یہ نرم زباں سے
بچی مری رخصت ہے تو اب باپ سے ماں سے

اے جانِ پدر دیکھ وفادار ہی رہنا
آئے جو قیامت بھی تو ہنس کھیل کے سہنا

کی لاکھ مگر ایک بھی کام ائی نہ تدبیر
مجبور ہوں مجبور یہ تقدیر ہے تقدیر

اپنا تبصرہ بھیجیں