Taaqub

نظم:تعاقب
مجھ سے پہلے کے دن
اب بہت یاد آنے لگے ہیں تمہیں
خواب و تعبیر کے گم شدہ سلسلے
بار بار اب ستانے لگے ہیں تمہیں
دکھ جو پہنچے تھے تم سے کسی کو کبھی
دیر تک اب جگانے لگے ہیں تمہیں
اب بہت یاد آنے لگے ہیں تمہیں
اپنے وہ عہد و پیماں جو مجھ سے نہ تھے
کیا تمہیں مجھ سے اب کچھ بھی کہنا نہی
Nazam:Taaqub
Mujh Se Pahle Ke Din
ab bahut yaad aane lage hain tumhein
 
khwab-o-tabir ke gum-shuda silsile
bar bar ab satane lage hain tumhein
 
dukh jo pahunche the tum se kisi ko kabhi
der tak ab jagane lage hain tumhein
 
ab bahut yaad aane lage hain tumhein
apne wo ahd-o-paiman jo mujh se na the
 
kya tumhein mujh se ab kuchh bhi kahna nahin

اپنا تبصرہ بھیجیں