Na Tha Kuch To Khuda Tha

نہ تھا کچھ تو خدا تھا کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا
ڈبویا مجھ کو ہونے نے نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا

ہوا جب غم سے یوں بے حس تو غم کیا سر کے کٹنے کا
نہ ہوتا گر جدا تن سے تو زانو پر دھرا ہوتا

ہوئی مدت کہ غالبؔ مر گیا پر یاد آتا ہے
وہ ہر اک بات پر کہنا کہ یوں ہوتا تو کیا ہوتا

Na Tha Kuch To Khuda Tha, kuchh na hota to khuda hota
duboya mujh ko hone ne, na hota main to kya hota
 
hua jab gham se yun be-his to gham kya sar ke katne ka
na hota gar juda tan se to zanu par dhara hota
 
hui muddat ki ‘ghaalib’ mar gaya par yaad aata hai
wo har ek baat par kahna ki yun hota to kya hota

اپنا تبصرہ بھیجیں