Yeh Aik Baat Samjhne Mein Raat Hogai Hai

Yeh Aik Baat Samjhne Mein Raat Hogai Hai

Yeh Aik Baat Samjhne Mein Raat Hogai Hai
Mein es se jeet gaya hoon keh maat hogai hai

Mein ab ke saal parindon ka din manaon ga
Meri qareeb ke jangal se baat hogai hai

Bichar ke tujh se na khush reh sakon ga sucha tha
Teri judayi hi waja nishat hogai hai

Badan mein aik tarf din tuloo mein ne kia
Badan ke dosray hissay mein raat hogai hai

Mein jangalon ki tarf chal para hoon chor ke ghar
Yeh kia keh ghar ki udasi bhi sath hogayi hai

Rahega yaad madine se wapsi ka safar
Mein nazam likhne laga tha keh naat hogai hai

Yeh aik baat samjhne mein raat hogai hai
Mein es se jeet gaya hoon keh maat hogai hai
غزل
یہ ایک بات سمجھنے میں رات ہو گئی ہے
میں اس سے جیت گیا ہوں کہ مات ہو گئی ہے

میں اب کے سال پرندوں کا دن مناؤں گا
مری قریب کے جنگل سے بات ہو گئی ہے

بچھڑ کے تجھ سے نہ خوش رہ سکوں گا سوچا تھا
تری جدائی ہی وجہ نشاط ہوگئی ہے

بدن میں ایک طرف دن طلوع میں نے کیا
بدن کے دوسرے حصے میں رات ہو گئی ہے

میں جنگلوں کی طرف چل پڑا ہوں چھوڑ کے گھر
یہ کیا کہ گھر کی اداسی بھی ساتھ ہو گئی ہے

رہے گا یاد مدینے سے واپسی کا سفر
میں نظم لکھنے لگا تھا کہ نعت ہوگئی ہے

یہ ایک بات سمجھنے میں رات ہو گئی ہے
میں اس سے جیت گیا ہوں کہ مات ہو گئی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں