Dard Phail jaye tou

Dard Phail Jaye Tou

Dard Phail Jaye Tou
Aik waqt ata hai
Arzoo Guzedon ke
Hoslay nahi chaltay

Dusht be-yaqeni mein
Asray nahi chaltay
Aik zra tawjo se
Dekhiye tou khulta hai

Log in pe chaltay hain
Rastay nahi chaltay
Ishq ke ilaqay mein
Hukam-e-yaar chalta hai

Zabtay nahi chaltay
Hassan ki adalat mein
Aajzi tou chalti hai
Martabay nahi chaltay

Dosti ke rishton ki
Parwarish zarori hai
Silsile talaq ke
Khud se ban tou jate hain

Lekin in shaghufon ko
Totnay bikharne se
Rokna parta hai
Chahaton ki matti ko

Arzoo ke poday ko
Sinchna bhi parta hai
Ranjashon ki baato ko
Bholana bhi parta hai

Dard phail jaye tou
Aik waqt ata ha
نظم
درد پھیل جائے تو
ایک وقت آتا ہے
آرزو گزیدوں کے
حوصلے نہیں چلتے

دشتِ بے یقینی میں
آسرے نہیں چلتے
ایک ذرا توجُہ سے
دیکھئیے تو کھُلتا ہے

لوگ ان پہ چلتے ہیں
راستے نہیں چلتے
عشق کے علاقے میں
حکمِ یار چلتا ہے

ضابطے نہیں چلتے
حسن کی عدالت میں
عاجزی تو چلتی ہے
مرتبے نہیں چلتے

دوستی کے رشتوں کی
پرورش ضروری ہے
سلسلے تعلق کے
خود سے بن تو جاتے ہیں

لیکن ان شگوفوں کو
ٹوٹنے بکھرنے سے
روکنا بھی پڑھتا ہے
چاہتوں کی مٹی کو

آرزو کے پودے کو
سنچنا بھی پڑتا ہے
رنجشوں کی باتوں کو
بھولنا بھی پڑتا ہے

درد پھیل جائے تو
ایک وقت آتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں