Pehaly Pehal To Thora Dilasa Diya Gaya

غزل
پہلے پہل تو تھوڑا دلاسہ دیا گیا
پھر ہم کو واپسی کا کرایہ دیا گیا
قمیت وصول کی گئی اگلی شراب کی
یوں نہیں کسی کو سہارا دیا گیا
اُس نے عدالتوں میں گھیسٹا نہیں ہمیں
عبرت بنا کر چوک میں لٹکا دیا گیا
لگ تو یہی رہا تھا قیامت قریب ہے
دنیا کو جیسے آخری خطبہ دیا گیا
میں نے کہا مانگ لو کچھ بھی میرے سوا
اک شخص اُس نے مانگا اُسے لا دیا گیا
اُٹھ اُٹھ کے بولتے تھے جہاں ہوگئے خاموش
ہم کو وہاں ، وہاں کا حوالہ دیا گیا
 
Ghazal
Pehaly Pehal To Thora Dilasa Diya Gaya
Phir hum ko wapisi ka karia diya gaya

Qeemat wasool ki gae agle sharab ki
Youn nahi kise ko sahara diya gaya

Us nay adlaton main gehsita nahi humein
Ebrat bana kar chowk main latka diya gaya

Lg to yahi raha tha qayamat qareeb hai
Duniya ko jisay akhri khutbah diya gaya

Main nay kaha mang lo kuch bhi meray siwa
Ek shakhs us nay manga usay la diya gaya

Uth uth ky boltay thy jahaan ho gay khamosh
Hum ko wahaan , wahan ka hawala diya gaya

اپنا تبصرہ بھیجیں