Chashm-E-Wehshat Ki Paishmani Nahi Dekhte Hain

Chashm-E-Wehshat Ki Paishmani Nahi Dekhte Hain

Chashm-E-Wehshat Ki Paishmani Nahi Dekhte Hain
Mere gallon peh para pani nahi dekhte hain

Haye ujare hoye shahron ko basanay wale
Dil mein pheeli hoi weraani nahi dekhte hain

Kis tarah qaid kinarun ki sahari hogi
Log darya ki parishani nahi dekhte hain

Mujh ko ahbab tahi dast samjh lete hain
Mere shairun ki farwani nahi dekhte hain

Koi likhta nahi aflaas zada chehron par
Aankh wale bhi yahan yani nahi dekhte hain

Tuhmatein asal mein mizaaj howa karti hain
Ishq mein chak garibani nahi dekhte hain

Apni mushkil ki aziyat ko barhanay ke liye
Hum kisi aur ki aasani nahi dekhte hain

Chashm-e-wehshat ki paishmani nahi dekhte hain
Mere gallon peh para pani nahi dekhte hain
غزل
چشمِ وحشت کی پشیمانی نہیں دیکھتے ہیں
میرے گالوں پہ پڑا پانی نہیں دیکھتے ہیں

ہائے اُجڑے ہوئے شہروں کو بسانے والے
دل میں پھیلی ہوئی ویرانی نہیں دیکھتے ہیں

کس طرح قید کناروں کی سہاری ہوگی
لوگ دریا کی پریشانی نہیں دیکھتے ہیں

مجھ کو احباب تہی دست سمجھ لیتے ہیں
میرے شعروں کی فراوانی نہیں دیکھتے ہیں

کوئی لکھتا نہیں افلاس زدہ چہروں پر
آنکھ والے بھی یہاں یعنی نہیں دیکھتے ہیں

تہمتیں اصل میں مزاج ہوا کرتی ہیں
عشق میں چاک گریبانی نہیں دیکھتے ہیں

اپنی مشکل کی اذیت کو بڑھانے کے لئے
ہم کسی اور کی آسانی نہیں دیکھتے ہیں

چشمِ وحشت کی پشیمانی نہیں دیکھتے ہیں
میرے گالوں پہ پڑا پانی نہیں دیکھتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں